پلندری 378

کالا بن سے پلندری واٹرسپلائی سکیم پروجیکٹ کرپشن کی نظر

کالا بن سے پلندری واٹرسپلائی سکیم پروجیکٹ کرپشن کی نظر


سکائی اُردونیوز پلندری ۔کالا بن سے پلندری واٹر سپلائی سکیم پراجیکٹ کا کام کیا جا رہا ہے جو کے بہت ہی ناقص ہے کیا یہ منصوبہ لائف ٹائم کا نہیں تھا۔۔۔؟؟ نہ تو کوئی پراپر لائن بچھائی جا رہی ہے اور نہ ہی ولڈینگ کا معیار کسی بھی طرخ سے سہی ہے ۔

جیسے جیسے یہ منصوبہ اپنی تکیمل تک پہنچ رہاہے اپنے ساتھ ہونے والی کرپشن کی داستان خود بیان کررہاہے۔سوشل میڈیا پر پلندری کی عوام اس پروجیکٹ میں ہونے والی لاپرواہی اور کرپشن کے خلاف سراپا احتجاج ہیں ۔


پلندری سے کالا بن واٹر سپلائی سکیم جس کا بجٹ تقریبا396.55ملین روپےہے ۔واٹر سپلائی سکیم کا پروجیکٹ جو کے پورے پلندری شہر کی بنیادی اور اولین ضروتوں میں سے ایک ہےکرپشن کی نظر ہوتا جا رہاہے۔جس پر عوام علاقہ کا شدید ردعمل دیکھنے میں آرہا ہے۔عوام علاقہ کا کہنا ہے کے یہ پروجیکٹ نا تو پراپر سروے کے مطابق کیا جارہاہے بلکہ پائپ لائنوں کے جوڑ وں کی ویلڈنگ بھی انتہائی ناقص کی جارہی ہے جو کے 6ماہ بھی بمشکل نکالے گی ۔

اگر آج پلندری کے MLAڈاکٹر محمد نجیب نقی صاحب اور اپوزیشن لیڈران نے اس پروجیکٹ پر توجہ نہ دی تو اس کا حال بھی پلندری کے ہسپتال جیسا ہو جائے گا۔پلندری شہر پانی جیسی بڑی نعمت سے محروم ہوجائے گا۔

انجمن تاجران پلندری کے صدر سرادار ارشاد احمد طاہر،جنرل سیکرٹری مظہر آکاش اور سینئر نائب صدرسردار راشد لطیف جو کے اس وقت پلندری شہر کے انتظامی معاملات دیکھ رہے ہیں ان کو حصوصااس پراجیکٹ میں دلچسپی کا اظہار کرنا چاہیے تا کہ پلندری شہر کی اہم اور بنیادی ضرورت میں کسی بھی قسم کی کو ئی رکاوٹ نہ پیش آسکے۔

زیز نظر چند تصاویرواٹر سپلائی سکیم پروجیکٹ کی ہیں جن کو دیکھ کر بخوبی کام کی نوعیت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں