cyber crime in Azad Kashmir 80

آزادکشمیر گورنمنٹ کا بڑا اقدام سائبر کرائم کے تمام تر اختیارات ضلعی تھانوں کو منتقل

مظفر آباد۔(سکائی اُردونیوز)آزاد کشمیر میں سائبر کرائم ایکٹ کے تحت سوشل میڈیا پر مذہبی منافرت پھیلانے والوں کے خلاف کاروائی کرنے کے لیے تمام تھانوں کو مکتوب ارسال
سوشل میڈیا پر مذہبی منافرت پھیلانے والوں کو 10سال قید اور 1کروڑ روپے جرمانہ کیا جائے گا۔

مزید پڑھیں۔ٓآزادکشمیر گورنمنٹ نے کروناوائرس کے مریضوں اور لاک ڈائون کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ جاری کردی

حکومت آزادکشمیر کی جانب سے آزادکشمیر میں سائبر کرائم ایکٹ کے منظور ہونے کے بعد سوشل میڈیا صارفین کو کنٹرول کرنے کے لیے پلان تیار کرلیا گیا ہے۔

اس تسلسل میں مذہبی منافرت پھیلانے ،صحابہ کرام یا اہل بیت کے بارے میں گستاخی یا ہتک امیز مواد شیئر کرنے والوں کے خلاف کاروائی کرنے کے لیے آزادکشمیر کے تمام تھانوں کو مکتوب ارسال کردیئے گئے ہیں۔

مزید پڑھیں۔انصاف امداد کی ایپ آگئی ابھی ڈاون لوڈ کریں ۔اور 12000 روپیے حاصل کریں۔

جس کے تحت کوئی بھی شخص مذہبی منافرت پھیلاتے ہوئے کسی کو ترغیب دیتے ہوئے اُکستائے ہوئے یا پھر شہر کاامن خراب کرنے کے لیے مذہبی منافرت کا مواد شیئرکرنے والوں کے خلاف کاروائی عمل میں لائیں گئے۔

جس پر حکومتی اداروں کی جانب سے تمام سوشل میڈیا صارفین کو خبردار کردیا گیا ہے۔اس سے قبل مذہبی منافرت اور گستاخی صحابہ اہل بیت اور گستاخ رسول پر دفعہ 298/295cپاکستان پینل کورڈکے تحت کاروائی کی جاتی تھی۔اب سائبر کرائم اور تعزیرات پاکستان کی دفعات بھی شامل کی جائیں گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں